اس مضمون میں ہم کچھ اہم عناصر پر مشتمل ویدوں کا دین کا خلاصه پیش کرنے کی کوشش کرینگے – جو کہ بنی نوع انسان کا واحد دین ہے. (مہربانی کرکے یہ بات دھیان میں رکھیے کہ دین سے ہمارا مطلب دھرم سے ہے، کوئی فرقہ وارانہ گروہ سے نہیں. انگریزی اور دوسرے زبانوں میں خامیاں ہیں کیوں کہ وہ نا پختہ اور کم ظرف سماجوں میں پیدا ہوئے، اور اسلئے ان سے درستگی اور ادائیگی کی توقع نہیں کیا جا سکتا، لہذا دھرما، کرما، برہمچریا وغیرہ جیسے الفاظ کے لئے کوئی تطبیق نہیں. تو ہمیں مذہب یا دین جیسے اندازہ لانے والی الفاظ کا استمعال کرنا ہوگا. جب تک وہ دن نہ آے کہ عالم انسان عقلانیت کا رتبہ حاصل نہ کرے، اور ویدک فرہنگ اور زبان کو جہاں میں ممتاز درجہ دیں، تب تک گفتگو اور مواصلات میں ایسے شکاف ملتے رہینگے.(

یاد رکھئے گا کہ وید ایک ایسے زمان سے تعلق رکھتے ہیں جب واحد فرقہ انسانیت تھا (اور یہ بھی “منشیتا” کا ایک غریب ترجمہ ہے). جب کہ ویدوں میں مختلف موضوع پر تفصیلی اور گہری معلومات ہیں، اور اس میں مسرّت اور حق کے عالی ترین درجات تک پہنچنے کا مکمّل چارچوب ملتا ہے، مندرجہ ذیل نقاط میں صرف اس طریقہ کا خلاصہ ہے کہ ویدوں کے پیروی کرنے کے کیا شرایط ہیں. علم، خیالات، نظریات اور عقل سے قطع نظر، اگر کوئی شخص ان نقاط کی پیروی کرے تو وہ یقینا ویدک دین کی راہ پر چل رہا ہے. اگرچہ وہ کوئی بھو رسوم، رواج، روایات یا معیار سے منسلک نہیں، لیکن ان نقاط پر اٹل رہے، تو وہ ویدک دین پر چل رہا ہے.

 یہی وہ واحد دین ہے جسکی تبلیغ اگنویر کرنا چاہتا ہے، اور یہی واحد طریقہ ہے جو حق اور مسرّت تک پہنچاتا ہے. ان میں سے کچھ نقاط ایسے ہیں جو دوسرے مذاھب اور گروہ میں پاے جاینگے. اسکی وجہ یہ ہے کے وائیڈ ہی ہر خوبی اور نیکی کا اصل سرچشمہ ہے. ان مذاھب اور فرقوں میں جو کچھ نیک ہے وہ ویدوں کی وراثت ہے. لہذا اگر شخص کوئی بھی نیک قدم اٹھاۓ، تو اسکا  مطلب ویدوں کے دھرم سے ہے. ویدک اساس سے محروم کوئی ایک پل کے لئے بھی جی نہیں سکتا. زندگی کی کوشش یہ رہنی چاہئے کے باقی ضایع  اور فالتو چیزوں کو گڑھے کی طرح گھسیٹنے کے بجاے نکال کر خود کو پاک کریں.

تو یہ ہے ویدک طریقہ کا خلاصه. ان اصول کو اپنے آغوش میں لے لو اور سپنوں سے بھی بہتر مسرّت کی زندگی جیو.  (اصل ہندی مضمون کا جائزہ لینے کے لئے یہاں جائے اور “ویدوکتا-دھرما-وشے” نامیده فصل کو پڑھیے.(

١. رگ وید  کا آخری سوکت (١٠.١٦١) اس بات کا خلاصه پیش کرتا ہے کہ انسان کو ویدوں کا پیغام حزم کرنے کے لئے کیا کرنا چاہئے. تمام ویدوں کو اسی سوکت کے لحاظ سے سمجھنا اہم ہے، جو کہ انسانوں کی سب سے منفرد خاصیت پر تاکید دیتا ہے – اتحاد – نیت میں، طریقہ میں، اور نقطۂ نظر میں.  مندرجہ زائل ہے ایک فہرست جو ویدک مذہب کے ہدایتوں کا خلاصه کرتا ہے.

رگ وائیڈ ١٠.١٦١.٢

١.  حق کی راہ میں چلو، بنا کسی تعصّب، بے انصافی، اور آدم برداشت کے.

٢. ایک دوسرے سے ملکر گفتگو کرو، تا کہ علم، حکمت اور پیار میں اضافہ ہو، اور بنا کوئی نفرت اور بد نیتی.

٣. باہم تعاون  میں لگے رہو تا کہ علم اور مسرّت میں اضافہ ہوتا رہے.

٤. حق اور قربانی کی راہ کا پیروی کرتے رہو، جسکی مصال عظیم شخصیتوں سے ملتی ہے.

رگ وید  ١٠.١٦١.٣

١. حق اور باطل کی تشخیص میں تعصّب مت کرو اور کسی خاص فرقہ سے متاثر نہ ہو.

٢. سبھی کو ساتھ ساتھ منظم ہونا چاہئے تا کہ سبھی کی مدد کی جا سکے اور انکے صحت، علم اور خوشحالی میں بہتری ہو.

٣. آپکے دل و دماغ کو نفرت سے پاک کرو، اور سبھی کے ترقی اور خوشی میں اپنا ترقی اور خوشی دیکھنا سیکھو،، اور صرف تمام دنیا کی خوشی  اور بہتری کے لئے سچائی کے مطابق کوشش کرتے رہو.

٤. ساتھ ملکر جھوٹ کو مٹاؤ اور سچ دریافت کرو.

٥. سچائی اور اتحاد کی راہ سے کبھی گریز نہ کرو.

رگ وید  ١٠.١٦١.٤

١.  آپکی جد و جہاد جوش سے بھرا ہونا چاہئے، اور سب کے خوشی کی نیت سے.

٢. آپکے احساسات سبھی کے لئے ہونی چاہئے اور دوسروں سے اپنے جیسے محبّت کرو.

٣. آپکی خواہش، عزم، تجزیہ، ایمان، پرہیز، صبر، ہوشمندی، توجہ، راحت، وغیرہ سارے صفات کو سب کے  حق اور مسرّت کی اور  ہونی چاہئے اور جھوٹ سے ہٹ کر.

٤. ایک دوسرے سے مطابقت رکھتے ہوئے کوشش کرتے رہو تا کہ باہمی علم اور خوشی میں اضافہ ہوتا رہے.

٢. یجر وید ١٩.٧٧ –

ہر انسان کو ہر وقت صرف حق کا انتخاب اور باطل کو مسترد کرنے کا جذبہ ہونا چاہیے. اس کردار کو ایک مسلسل رویّہ کی طرح انجام دینا چاہئے، اور شخص کو ہر اس چیز سے ایمان ہٹانا چاہئے جو غلط ثابت ہو، اور ہر اس چیز پر ایمان لانا چاہئے جو جائز اور سچ نمایاں ہو، جو کہ تجزیہ، منطق، حقیقتیں اور سبوت پر صادق اترتا ہو.

٣. یجر وید ٣٦.١٨ –

– انسانوں کو کسی بھی اور جیو اور مخلوق کے ساتھ نفرت نہیں جتانا چاہئے، اور ایک دوسرے کے ساتھ پیار موحبّت کا برتاؤ رکھنا چاہئے.

– انسان کو تمام زندہ مخلوقات کو اپنا دوست سمجھ کر سب کے خوشحالی کے لئے کردار نبھانا چاہئے.

٤. یجر وید ١.٥  –

ہر انسان کو حق پذیر ہو کر جھوٹ کو مسترد کرنے کا شوق اور ارادہ ہونا چاہئے. خدا بزرگ کو التماس بھی یہی ہونا چاہئے کے باطل کا خاتمہ ہو تا کہ  سچائی کو آغوش میں لے سکیں.

٥. یجر وید ١٩.٣٠ –

جب کوئی سچائی کا ڈٹ کر پنتھ بن جے، تو وہ مسرت اور مزید سچائی کا مستحق ہو جاتا ہے. جب وہ اس طرح حقدار بن جاۓ، تو انکو علم اور اطمینان کے روپ میں امتیاز سے نوازا جاتا ہے. ایسے تحفے انسان میں سچائی کی تلاش کا ارادہ اور یقین میں گہرائی پیدا کرتا ہے. جب یقین بڑھتا ہے، تو مسرّت اور علم میں بھی تیزی پیدا ہوتا ہے. بلاخرہ یہ سلسلہ علیٰ ترین خوشی یا نجات تک پہنچتا ہے.

٦. اتھاروا وید ١٢.٥.١ اور ١٢.٥.٢ –

– “شرما” یعنی کڑی محنت، اور “تپ ” یعنی چنوتیوں اور مشکلات کو اپنے مقصد کے لئے خوشی سے جھیلنے کی خواہش، یہ دونو انسان کی بنیادی صفات ہیں جسے کبھی چھوڑنا نہیں چاہیے.

– “شرما” اور “تپ” کے زریعہ انسان کائنات کی عظیم ترین رموز کا انکشاف کر سکتا ہے اور برہما یعنی حقق علی کے علم کو سمجھ سکتا ہے.

– “شرما” اور “تپ” کو سچائی کا اتخاذ اور جھوٹ کو ترک کرنے کے لئے استمعال کرنا چاہیے.

– “شرما” اور “تپ” کو اپنی جائداد اور قوم کی فراوانی کے لئے استمعال کرنی چاہیے.

– “شرما” اور “تپ” کو صرف سچائی پر مبنی شوھرت کے لئے کارمند فرمانا چاہیے.

٧. اتھاروا وید ١٢.٥.٣ –

– اپنے ہی چیزوں کا استمعال کرنا چاہیے، اور دوسروں سے چوری نہیں کرنا چاہیے.

– اس حالت کو یقینی بنانے کی کوشش کیجئے کے سبھی کو ایک دوسرے پر وشواس اور بھروسہ ہو. سچائی کے لئے جذبہ کے بنا وشواس پیدا نہیں ہوتا. اسلئے ہر حال میں سچائی سے منحرف نہ ہوں.

– سچے علم، عالم، اور معصوم لوگوں کی حفاظت کے لئے بری سے بری کوشش میں کوئی کسر نہ چھوڑنا.

– بہترین فائدہ کو نچوڑنے کے لئے “یگیہ” میں شریک ہوں – سبھی کے لئے غیر جانبداری کے ساتھ فدا ہونا، جس سے سچے علم کا فروغ ہو اور اس کا  مختلف شعبوں میں عمل بھی ہو.

– کبھی آلسی مت بنو اور مسلسل “یگیہ” کے لئے کوشاں رہو.

٨. اتھاروا وید ١٢.٥.٧ سے ١٢.٥.١٠ –

(یہ منتر ویدوں کا طریقہ کا مکمّل تصویر پیش کرتے ہیں)

اوجس – سچائی کی پیروی میں دلیری.

تیجس – بے خوفی.

ساھس – خوشی، غم، زیاں یا فائدے کے باوجود سچائی کی پیروی کرتے رہنا.

بل – جسمانی اور ذہنی طاقت کو بڑھاتے رہنا، برہمچریا، نظم و ضبط، اور ورزش کے ذریعہ.

واک – سچ کی تبلیغ کے لئے ظرافت کے ساتھ بولنا.

اندریہ – ٥ احساس کے عضو، ٥ عمل کے عضو اور دماغ کو سچائی اور نیکی کی طرف ہدایت دینا اور گناہوں سے پرہیز.

شری – ساری کوشش کو تمرکز کرکے ایک ایسے ملک کی تعمیر کی منصوبہ بندی کرنا جو حق، انصاف، اور صداقت کی بنیاد پر بنا ہو، اور ان حکمرانوں کو گرانا جو کہ بد عنوان، ضعیف، بے غیرت، اور خود غرض ہوں.

دھرم – مسلسل سچ کا استقبال کرنا، اور جھوٹ کو ترک کرنا، اور اس طرح تمام انسانیت اور مخلوقات کے لئے فائدے مند کردار ادا کرنا.

برہما – علماء اور عظیم شخصیات کو فروغ اور عزت دینا جو کہ علم کی تبلیغ کر سکے.

کشترا – جانباز لوگوں کو فروغ دینا جو کہ ملک اور قوم کی حفاظت کریں، اور ان بد معاشوں کو سخت سزا پہنچے جو معصوم لوگوں کو تکلیف دن یا سماج جو بدنام کریں.

وشا – پیداوار اور تجارت کو فروغ دیں جو ایک بین الاقوامی اقتصادی نظام کو تشکیل دے سکے، اور جو غیر منصفانہ امتیاز سے پاک ہو.

تویشی – صرف عظیم صفات اور سچائی کے اشتہار اور فروغ میں ہی لگے رہنا.

یش – جہانگیر شوھرت کے لئے محنت کرنا، لیکن صرف سچائی اور عظیم صفات کے بل پر.

ورچہ – تمام مردوں اور خواتین کے لئے ایک مستحکم اور عاقل تعلیمی نظام کو قائم کرنا.

دروینم – مندرجہ بلا صفات کے ادھار پر زیادہ سے زیادہ دولت کو کھوج نکالنے کا کوشش کرنا، کمایے ہوئے دولت کی حفاظت کرنا، اس میں اضافہ کرنا، اور سرمایہ کاری کے ذریعہ علم اور اچّھے صفات کی تبلیغ کرنا.

ایو – اپنے زندگی کو طولانی بنانے میں خیال رکھئے گا.

روپم – صاف اور تمیز لباس پہننا جو عزت اور اقبال پیش کرتے ہو.

نام – مصال قائم کرو جس سے دوسرے لوگ بھی سچائی کی رہ کے طرف متاثر ہوں.

کیرتی – سچے علم کی تبلیغ کریں تا کہ ہم بھی اس شوھرت میں شریک ہو سکے.

پران اپان – پاس انفاس کا ذریعہ بیماریوں کو دور کرنا اور زندگی دراز محفوظ رکھنا.

چکشو شروترا – احساس کے عزو کو ہمیشہ سچ کی جستجو اور جھوٹ کے تجزیہ میں لگاہے رکھنا.

پے رس – ان نوشابہ کو پینا جو صحت اور زندہ دلی میں افزائش لاۓ، جیسے دودھ پانی، اور دیگر دوایاں.

انّ انّادیا – متناسب، سالم اور بے خطر غذا خانہ جو کے علم طب کے مطابق مفید یا ضروری ہوں.

رتم – صرف اس نہائی ایشور کی پرستش کرنا جو علی ہے، اور اس کے علاوہ کچھ نہیں.

ستیم – اپنے علم، قول اور فعل میں مطابقت ہوں اور متلاقاً تضاد نہ ہو.

اشٹم – فقط ایشور کے پرستش کے ذریعہ کامل مسرّت کی خواہش رکھنا جو کہ ان سبھی اچھے صفات کے ذریعہ نبھایا جا سکتا ہے.

پورتم – مندرجہ بالا “اشٹم” کے لئے منصوبہ بندی اور عمل کرنا.

پرجا – مردم اور اگلے نسل کو تمام سچے علم اور فعالیت کے شعبے کی تعلیم دینا.

پشوا – حیوانات کی دیکھ بھال بھی کرنا.

یہ منتر “چہ” یعنی “اور” کا استمعال انیک بار کرتا ہے، اس بات پر تاکید دینے کے لئے کہ بتایے گئے صفات کے علاوہ جو کچھ صفات عوام میں سچ اورحکمت کو فروغ دیتے ہوں اور جھوٹ و رنج کو نکالنے میں مددگار ہوں، انھیں قبول کرنے کے لئے ہمیشہ آمادہ رہئے.

ویدوں پر مبنی دوسرے کتاب مذہب یا دھرم کے اس موضوع کو تفصیل سے بیان کرتے ہیں، اور وید کے ہی بہت سے دیگر منتر اس پرتبصرہ کرتے ہیں. دھرم پر کچھ بہترین تفصیلات ان میں پاے جاتے ہیں – تیتریه ارنیک ٧.٩.١١؛ ١٠.٨؛ ١٠.٦٢ اور ١٠.٦٣؛ منڈک اپنشد ٣.١.٥ اور ٦؛ اور پوروا میمانسا ١.١.٢ جو بیان کرتا ہے کے جو کچھ ایشور کی نصیحت ہے ویدوں میں، وہی دھرم ہے.

)آپ ان کو تفصیل سے پڑھ سکتے ہیں “رگ وید بھاشیہ بھومیکا” میں، یا “ویدوں سے تعارف” جو سوامی دیانند جی کی تصنیف ہے، جس میں ایک باب کا نام ہے  “ویدوکتا دھرم وشے”. یہ ویدوں کے معنی کے متلاشی کے لئے لازمی مطالعہ ہے(.

دھرما یا مذہبی طریقہ کا کی تعریف “ویشیشک” نقطہ نظر سے “ویشیشک درشن” ١.١.٢  میں دیا گیا ہے – “جو کچھ بھی مکمّل کائنات کے لئے خوشی اور علی ترین مسرّت یا موکش کی راہ میں کام آے – صرف وہ دھرم ہے.”

تمام انسانیت کو تنہا اس وید کی پیروی کنی چاہیے، اور جو کچھ بھی اس سے منحرف یا متضاد ہو، یا اس میں غیر ضروری باتیں ملا دیں، ان سب کو مسترد کرنا چاہیے. یہی انسانیت کا اکلوتا دین ہے. انسان کا دو مذہب نہیں ہو سکتا. آئے، توصیف شدہ صرف اس طریقہ کو اپنا لیجئے، اور باقی سارا خرافات کو مسترد کیجئے!

سچائی امر رہے!

 
This translation has been contributed by Aatish. Original post in English is available at http://agniveer.com/religion-vedas

This post is also available in Malayalam at http://agniveer.com/religion-vedas-ma

This post is also available in Gujarati  at http://agniveer.com/religion-vedas-gu/

 

Facebook Comments

Liked the post? Make a contribution and help bring change.

Disclaimer: By Quran and Hadiths, we do not refer to their original meanings. We only refer to interpretations made by fanatics and terrorists to justify their kill and rape. We highly respect the original Quran, Hadiths and their creators. We also respect Muslim heroes like APJ Abdul Kalam who are our role models. Our fight is against those who misinterpret them and malign Islam by associating it with terrorism. For example, Mughals, ISIS, Al Qaeda, and every other person who justifies sex-slavery, rape of daughter-in-law and other heinous acts. For full disclaimer, visit "Please read this" in Top and Footer Menu.

19 COMMENTS

  1. Rashid Bhai, Aap kaunse Islam ko maante hai? Wo Islam jo Zakir Naik jaise log seekhate hai ya wo Islam jo Tarek Fatah jaise log maante hai?
    Rahi baat Asan hone ki, to kindergarten me padhayee engineering ki padhayee se asan hai. Kya aap logon ko kindergarten me hi rahane ko farmayenge ya unhe engineering, medicine jaise padhayee me jane ki ijajat denge?

  2. MAZHAB ISLAM AIK BOHAT ASAN MAZHAB HAI
    BAS IS MAIN ALLAH(GOD) KO AIK MANO AUR MUHAMMAD PEACE BE UPON HIM KO ALLAH(GOD)KA MESSANGER MAN LO
    AUR 5 TIME MASJID MAIN A KAR PRAYER KARO
    AUR JAB KISI DUSRAY KO MILO TO ASLAMUALAIKUM KAHO YANI TUM HAMAYSHA AMAN MAIN RAHO OR YA HAMAYSHA TUMHARI LIFE MAIN AMAN AUR SALAMTI RAHAY .
    KITNA PAYARA MAZHAB HAI ISLAM AIK DAFA READ KAR KAY TO DEKHO
    AGAR ISLAM KI STUDY KARNA CHATAY HO TO MUSLIM KI TARAF DEKH KAR MAT ANDAZA LAGANA KAY ISLAM AISA HOTA HAI
    Q KAY HAR MAZHAB MAIN LOOG ACCHAY BURAY HO SAKTAY HAIN .SO PLZ STUDY ISLAM
    RASHID MIRZA PAKISTAN

    • adarniy sri rashed ji , beshaq islame me bahut fayede hai ! jitni chaho utni patniya rakh sakte ho! muahammd ji ne bhi isnka bahut fayda uthaya ! bahut se nikah karke sex kiya aur anek mahilao ko laundiyo ka darja dekar bagair nikah ke sex karliya pata nah kita maza liya hoga? uneke ek pyare navase the hasan ji, unho ne to apnne jivan me 90 nikah kar dale the fir bhi islam ka niyam nahi toda tha, yani ek samay me 4 vivah vali mahilaye rahati thi , baki ati gayi- aur jati gayi. kyoi talaq dena to bahut aasan hai . agar sex ka fayda uthana to beshak islam bahut achha hai ? jara bataiye quran me jo anek mahilaye rakhne ki chut mili hai uska fayda apne uthaya ki nahi hai ? agar nahi uthaya to apne apne jivan me bahut badi bhul kardi ,jarajaldi kijiye iska fayda jarur uthaiye, bhala majahab me koi chut mile aur banda us chut se marhoom ho jaye to bhala jindgi ka maza kirkiar n ho jayega ? talaq to kahi bhi diya ja sakta hai
      jab hamne quran padhi to hamko quran ki yah “asani” samajh me nahi ayi usme koi ek ayat nahi mili jisme 5 baar namaz padhne ko kaha gaya ho, la ilaha illillah muahammad rsulullah ka kalma bhi kisi ej[k ayat me nahi mila !
      ” la ilaha ilillah zarra zarra raasulullah” kahane me apko kya taklif hai ? agarkeval ishvarkonmana jaye bich ke dalalo ko n mana jaye toisme kya dikkat hai ! ek anpadh vyakti ko bich ka dalal kyo mana jaye ?

      • mr what ever u…. jab kisi baat ki knowledge na ho to us k bare mai bura nhi bolna chahy. islam ne 4shadi ka hukum diya hai. pr ap 2-3-4 shadi agr krte ho to tumhe aisi aurat se shadi krni padengi. jo vidva ho, jo divorcy ho. jo be sahara ho. aur 4ro k haq same hai. ap k mazhab ki trha nhi kisi se bhi sex kiya chod diya. koi paap nhi. aur ap khud na jane kitni ladkiyo ko bina shadi kiy apne bistar pr sulaya honga. aur agr padhana nhi aata to sikh kr aao. kisi bhi nabi ya un k bette ne 90 shadi nhi ki hai. agr humare islam mai shadi sex hoti to city makka mai balatkar ki itni buri saza na hoti. chk kro ja kr. aj india mai aay din itne balatkar hote ho. agr aisi saza india m hoti to kiya yaha balatkar hote. jab kisi mazhab ko samjh nhi sakte to us k bare mai kuch bolo bhi mat. itni to tamiz sikhae hongi na ap k mazhab ne wo yaad rkho.

      • adarniy shri meher ji, jab jankari huyi hai tabhi apni baat rakhi hai
        arab me koi mahila rep ki riport nahi likha sakti kyoki 4 gavah kaise layegi 1 varna usi ko kode apdne lagenge .
        90 nikah hasan ji ne kiye the kyo aap jhuth bolte hai,agar hamko jhuth bolna hota to ham muhammad ji ke liye, aisa kahate 1
        is desh me jo rep hote hai uski uttar dayi sarkar hai prashasan hai .

  3. Brother as human beings are not same ….example Indians are different and Americans are different traditions are different ..cultures are different …no human being s same unless twins….in the same way religions also have some difference but the basic point in every religion teaches us to be disciplined and spiritually motivated.Every religion teaches us to be good to others and help others and love every one.
    And I want to say that Hinduism is not a religion its a way of life and all the religions are branches of Hinduism.Finally we all should leave this place and return to God .

    • No every religion does not do that. How “good” is defined and whom to help is not taught the same in all religions. Christianity and Islam teaches if you do not believe in Jesus or Mohammed you will burn forever in hell. No matter what you do in life. A horrible person who accepts Jesus or Mohammed is going to heaven while a person who saves say a million lives is going to hell just because he does not believe in Jesus or Mohammed. In Islam treating non-Muslims like second class dhimmis who are also heavily taxed (jiyza) and discriminated is being “good” to them while any normal person can see that there is nothing good about how dhimmis are institutionally discriminated in Islamic states and not afforded equal rights and protections. And not all non-Muslims get to be dhimmis. Those who are not dhimmis are not tolerated in an Islamic state, and their choices are conversion or death (death can be commuted to enslavement). And this idea of converting or killing non-Muslims who are not tolerated as dhimmis is considered being good to these non-Muslims. So no, the basics of religions are NOT all the same. Please also read this article http://www.hinduismtoday.com/modules/smartsection/item.php?itemid=1424

  4. Every religion is the same. We should not fight. we are all sons of god. U call god as eshwar or Allah he is the one. ” Raghupati Raghav Raja Ram
    Patita Pavan Sitaram
    Sitaram, Sitaram,
    Bhaj Pyare Mana Sitaram
    Raghupati Raghav Raja Ram
    Patita Pavan Sitaram
    Eshwar Allah Tero Nam,
    Sabako Sanmati De Bhagawan
    Raghupati Raghav Raja Ram
    Patita Pavan Sitaram”
    Mahatma Gandhi Bhajan.!

    One thing we should remember is we are born and some day we will die.We are just guests in this world..This world is god’s home. As guests we should be disciplined and god loving and thank god for giving us. no matter what book we read Gita Bible Quran the message is same to be disciplined and God Loving and peace Loving .
    Bagwan Eashwer did not say any where to comment on others please my hindu brother’s we should only see that Hindu Religion is not religion its way of living and every person born on earth is hindu…because Hinduism accepts every one as god and every religion is branch of hinduism..!!

    • All religions are not the same. In Christianity it is mandatory that you believe that Jesus is the ONE AND ONLY Lord and Savior, that all other faiths are false and other gods and goddesses are demons, and if you are not a Christian you will be tortured for all eternity in hell. In Islam you must believe Mohammed is the last prophet of the Abrahamic religions (Judaism and Christianity) and if you are not a Muslim you will go to hell as well. There are significant differences and these differences matter a great deal. You cannot brush them aside. Buddhism does not focus on God at all. It is as close to atheism as a person can get and still be spiritual. Please read this: All Religions are Not the Same – The problem with Hindu Universalism, A critique of radical universalism byFrank Gaetano Morales, Ph.D. (Dharma Pravartaka) http://www.hinduismtoday.com/modules/smartsection/item.php?itemid=1424

  5. Islam is superior.y? Allah told so. I doubt hm.its written in quran.quran is man made. Allah has taken responsibility to protect it. Dats islamic logic 4 u.

  6. Mr shariq i thnk iman is getting heavy on ur brain. U make me laugh islam is 4 gen next! If u hav the courage then let ur children c d truth themselves dont force them.

  7. Anand Joshi:- Aap yahan India mein rehke yeh sab bade asani se keh sakte…. magar shachai itni hai kai kai, mahant aur hindu islam dharam mein wapas arahe hain, No one convert in islam every one revert only. Insha ALLAH aap nahi toh aapki aane wali generation islam mein apni marzi se ayegi..

    • Even Mohammed converted to the religion he created, Islam. He was an Arab pagan originally. For some reason he got an inferiority complex to the Jews and wanted to be the last prophet of the Jews. Not of his own people’s native polytheistic faith, but of another people, the Jews. Mohammed in his inferiority complex to the Jews destroyed his own native Arab polytheistic pagan religion which his own tribe were the caretakers of in Mecca in the Kaaba. He usurped Jewish and the other earlier derivative Jewish faith, Christianity religious myths as his own and added his own personal stories and that is how you get the Koran, and Hadiths. He was such a megalomaniac that it was not enough that only a few people followed him as the last prophet of the Jews, but everyone had to, from his time to forever, and all over the world. Part of that by is saying falsely that everyone is born a Muslim but is taught a religion other than Islam because of their parents. He arrogantly possessively claims every human being ever born to be a follower of the faith he created where he is the main prophet and front and center. The other ways to spread his desert intolerant faith of course our suffering ancestors know all about (their mass murder, destruction of temples, enslavement etc…).

      • nhi dear islam kabul krne ka matlab apni marzi ko marna nhi. islam hume ek paak zindagi se milati hai. jis mai koi gandagi nhi hai. ek baar jo islami zindagi ji le wo kabhi khud ko apni nazar mai gira hua nhi payga. islam sikhata hai k ladkiyo ko parde mai rkho. bhai mere such batao jab koi hot sexy ladki samne aay to us ko dekh kr ap kiya bolonge. dusre ladke us pr koi na koi comment denge he na. agr aisi ladki ap ki wife ho to such batana tumhe pasand honga. islam hume buraeyo se bachata hai.

      • manniy shri meher ji, kuran to mul ki bhul hai , buraiyo ki bhandar bhi hai.
        kya soniya ji mamta ji jay lalita ji sushma ji adi sexy paridhan dharan karti hai 1 aisa hi paridhan muslim mahilaye kyo nahi apna sakti jaise mohisna kidvai , nazma heptulla , benajir bhutto hina ji shekh hasina adi ka paridhanhai !
        burka n pahanne ka yah arth nahi hota ki ladki sexy hai !
        janvaro ka mans khana ande khana kya yah islam ki gandgi nahi hai 1 batlaiye anda kis raste se nikalta hai ? jitne saal ka janvar utne saal ki ganndgi uske peg=t me hoti hai .

  8. The pre islamic arabs have texts of Vedas. The ancient arebic literature mentioning vedas. Ancient persian culture were following Vedic religion. Islam has vanished the preislamic culture in every country.Now the learned peoples in many Islamic countries are going away from Islam & they are searching their pre islamic identity. These books will helpful those people who wants true peace of mind.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here